تیل کا خزانہ تو کچھ بھی نہیں۔۔سعودی عرب سے ایسی چیز نکل آئی کہ پوری دنیا کو دھنگ رہ گئی۔۔ ناقابل یقین خبر

ریاض(نیوز ڈیسک)سعودی عرب میں مصر کے اہرام مصر سے بھی زیادہ پرانے اور حیرت انگیز آثار قدیمہ دریافت ہوئے ہیں، جنہیں مستطیل کا نام دیا گیا ہے۔ سعودی شہزادے بدر بن عبداللہ کے مطابق ان آثار قدیمہ کی عمر 7 ہزار برس سے زیادہ ہے۔پر شائع رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ ایک امریکی تحقیقی مطالعے کے مطابق سعودی عرب کے شمال مغربی علاقے میں آثار قدیمہ کی اہم دریافت سے اس بات کی تصدیق ہوتی ہے کہ عظیم الجثہ پتھری ڈھانچے دنیا کے قدیم ترین تاریخی ورثہ شمار ہوتے ہیں۔یہ بات سعودی وزیر ثقافت شہزادہ بدر بن عبدالله نے ہفتے کے روز ایک ٹویٹ میں

بتائی۔ سعودی شہزادے کے مطابق مذکورہ آثار کی عمر 7 ہزار برس سے زیادہ ہے۔امریکی مطالعے میں محققین کے حوالے سے یہ دلچسپ انکشاف بھی کیا گیا کہ سعودی عرب میں چٹان سے بنے ہزاروں سال قدیم ڈھانچے درحقیقت مصر میں واقع اہرام اور برطانیہ میں واقع پتھری دائروں سے زیادہ پرانے مذکورہ تحقیقی مطالعہ جمعرات کے روز انٹی کوئٹی جریدے میں شائع ہوا تھا۔ جسے امریکی ذرائع ابلاغ نے نشر کیا۔تحقیقی مطالعے کی مؤلفہ اور پرتھ میں ویسٹرن آسٹریلیا یونیورسٹی میں آثار قدیمہ کی سائنسدان میلیسا کینیڈی کے مطابق تحقیق میں 1000 سے زیادہ پتھری ڈھانچوں کا مطالعہ کیا گیا، سعودی عرب میں یہ آثار 2 لاکھ مربع کلومیٹر یا 77 ہزار مربع میل سے زیادہ رقبے پر پھیلے ہوئے ملے، یہ تمام پتھری ڈھانچے شکل میں ایک دوسرے سے بہت زیادہ ملتے ہیں۔تحقیقی مطالعے کے مرکزی مؤلف ہیو تھامس نے واضح کیا کہ بعض قدیم ڈھانچوں کی لمبائی 1500 فٹ سے زیادہ ہے تاہم یہ نسبتا تنگ ہیں، یہ ڈھانچے چٹانوں کی بنیادوں کے علاوہ پہاڑی اور علاقوں اور نسبتاً نشیبی علاقوں میں بھی پائے جاتے ہیں۔بعض محققین کا خیال ہے کہ یہ عظیم الجثہ ڈھانچے کسی سواری کو ایک جانب سے دوسری جانب لے جانے کیلئے بنائے گئے۔ یہ بات جانی نہیں جاسکی ہے کہ پرانے لوگوں نے یہ پتھری ڈھانچے کیوں تیار کئے تھے۔ البتہ کینیڈی کے قیاس کے مطابق ان میں سے بعض کو صرف ایک بار استعمال کیا گیا۔کینیڈی اور تھامس کے مطابق انہوں نے جن ڈھانچوں کا سروے کیا ان میں ایک ایسا ڈھانچہ بھی تھا جس کو 12 ہزار ٹن سیاہ مرمر پتھروں کو منتقل کر کے تیار کیا گیا، اس مشقت طلب کام میں یقیناً کئی سال لگے ہوں گے۔واضح رہے کہ آثار قدیمہ کے ان تحقیقی مطالعوں کی فنڈنگ العُلا روئل کمیشن کی جانب سے کی جاتی ہے۔ یہ کمیشن سعودی عرب کی حکومت نے قائم کیا تھا۔ اس کا مقصد مملکت کے شمال مغرب میں واقع العُلا کے علاقے میں تاریخی ورثے کا تحفظ ہے۔ العُلا میں کئی قدیم تاریخی تعمیرات پائی جاتی ہیں۔



اس وقت سب سے زیادہ مقبول خبریں


تازہ ترین خبریں
ایمانداری سے بتائیں آپ اپنے مشیروں اور زیروں سے مطمئن ہیں ؟ شہری کے براہ راست سوال پر عمران خان نے کیا جواب دیا ؟
فواد چوہدری کا دل کب جھوم جاتا ہے؟وفاقی وزیر نے آخر کار اندر کی بات بتا دی
شہباز شریف کی ضمانت ، اپوزیشن لیڈر کے خلاف بڑی کارروائی ڈال دی گئی
”ایسا تاثر گیا کہ سارے دفتر خارجہ کو برا بھلا کہہ رہا ہوں لیکن ایسا نہیں بلکہ ۔۔“وزیراعظم عمران خان نے وضاحت کر دی
نواز شریف کے حوالے سے حامد میر نے ایسی بات کہہ دی کہ سن کر مریم نواز کو بھی غصہ آجائے
وہ بات جس سے سعودی حکام چڑکھاتے ہیں لیکن عمران خان وہی کام کربیٹھے

خصوصی فیچرز
پاک سعودی تعلقات میں بہتری کی ’قیمت‘ کیا ہے؟ایسا دعویٰ کے پاکستانیوں کے ہوش اڑ جائیں گے۔۔
دنیا کا عظیم اورفاتح اور بادشاہ۔۔۔۔۔ حضرت عمر فاروق یا سکندر اعظم ؟ ۔۔۔ایسی تحریر جو آپ کی آنکھیں کھول دی گئی
افطاری سے پہلے جائے نماز پر بیٹھ کر یہ دعا پڑھیں، اٹھنے سے پہلے انشا اللہ بڑی سے بڑی حاجت فوری پوری ہو گی
مجھے 10لاکھ روپوں کی ضرورت تھی ، یہ چھوٹا سا ایک وظیفہ کیا اور 3دن میں پیسے مل گئے
سبحان اللہ سبحان اللہ۔۔حرم مکی میں نمازی کے سر پر کیا چیز آ کر بیٹھ گئی،ایسی ویڈیو وائرل کہ ہر مسلمان اللہ اکبر کہہ اٹھا۔۔
کیا بہن، بہنوئی کو زکوٰۃ دی جا سکتی ہے؟ایسی تحریر کو پڑھ کر آپ شیئر کرنے پر مجبور ہو جائیںگے

Copyright © 2020 Pakistan News Network. All Rights Reserved